Monthly Archives: April 2016

اراضی کی معلومات کی کمپیوٹرائزیشن۔حقیقی منزل ابھی دور ہے۔

abcd

مارچ2016 کے اوائل میں وزیر اعلی پنجاب نے اراضی معلومات کی کمپیوٹرائزیشن کی کامیاب تکمیل کا عندیہ دیا ہے، جبکہ میری محدود تحقیق کے مطابق یہ پروگرام محکمہ مال میں ناگزیر اصلاحلات کے نصف احداف بھی حاصل نہیں کر سکا ہے۔
دنیا بھر میں صدیوں سے رائج اصولوں کے مطابق زمین کی ملکئیت کا انتظام و انصرام اعداد و شمار کے رجسٹراور زمینی سروے کی مدد سے تیار کیے جانے والے نقشوں پر مشتمل ہوتا ہے۔انگریز سرکار نے تقریبا 200 سال پہلے برصغیر میں زمین کی ملکئیت کیلئے یہی نظام رائج کیا اور اس کے ساتھ ساتھ قانون سازی اور انتظامی ڈھانچہ بھی فراہم کیا۔ حالانکہ اس اصلاح کا مقصد انگریز سرکار کیلئے زیادہ سے زیادہ معاشی فوائد حاصل کرنا تھا لیکن برصغیر کے عوام کو ان اصلاحات سے نہ صرف ملکئیتی حقوق مل گئے بلکہ ملکئیتی جھگڑوں کے حل کے لئے ایک نظام بھی میسر آ گیا۔انگریز دور کا لاگو شدہ کمشنری نظام آج بھی نافذلعمل ہے۔اس نظام کے تحت زمینی ملکئیت کے اعداد وشمار کے لئے دو درجن رجسٹر تھے جن میں مالک کے ذاتی کو۱ئف، فصلات کی تفصیل،کل رقبہ،بیعانہ اور ذرائع آبپاشی جیسی معلومات درج ہوتی۔اس کے ساتھ ساتھ زمین پر پیمائش کے ذریعے کھیت کا رقبہ اور اس کے اطراف کی معلومات کو نقشہ کے ذریعے ظاہر کی جاتا تھا۔انگریز نے جب برصغیر پر قبضہ کیا توانہوں اس کے اصل رقبہ کی جانچ کے لئے عظیم مثلثی سروے کا اہتمام کیا۔ اس سروے میں ریاضی کے اصولوں کو مدنظر رکھتے ہوئے برصغیر کی ماہیئت کا درست اندازہ لگایا گیا۔اس سروے کی تکمیل تقریبا 77 سال میں ہوئی۔ انیسویں صدی کے نصف تک انگریز سرکار کی آمدنی کا 60 فیصد زمین سے حاصل شدہ محصولات سے تھا۔
تقسیم برصغیر کے بعد پاکستان کو انگریز کا یہ نظام ورثے میں ملا جو کہ آج تک معمولی تبدیلیوں کے ساتھ رائج ہے۔ماضی قریب میں جائزہ کا کوئی موثر نظام نہ ہونے کی وجہ سے زمین کی خرید و فروخت سے متعلق کوئی بھی کام بغیر رشوت نا ممکن بات تھی۔ پٹواری اس نظام کی بنیادی اکائی تھا جو سرکاری ریکارڈ کواپنی نجی تحویل میں رکھتا اوراور اس سے خاطر خواہ فوائد حاصل کرتا۔ورلڈ بنک نے 2006 میں اپنی رپورٹ میں اس نظام کو نہایت فرسودہ،ناقابل رسائی،کمزور،منتشر، اور غیر موثر قرار دیا تھا۔2013 میں کی گئی ایک بین الاقوامی تحقیق کے مطابق اس نظام سے وابسطہ 90 فیصد افراد اس میں اصلاح چاہتے ہیں۔
حکومت پنجاب نے میں میں ورلڈ بنک کے تعاون سے اراضی کے ریکارڈ کی کمپیوٹرائزیشن کا عمل شروع کیا جو کہ 2016 میں پایہ تکمیل کو پہنچا ہے۔اس کمپیوٹرائزیشن کے عمل سے اعداد و شمار کے رجسٹرز کے تقریبا 1 کروڑ صفحات کی کمپیوٹرائزیشن کی گئی ہے جس کی وجہ سے مواضعات میں موجود ساڑھے پانچ کروڑ زمین مالکان کا ریکارڈ کمپیوٹرمیں محفوظ ہو گیا ہے۔جبکہ اس نظام کا دوسرا حصہ جو نقشہ سازی پر مشتمل ہے ابھی بھی قابل توجہ ہے۔اراضی کی کمپیوٹرائزیشن کیلئے کاغذوں پر درج تمام ریکارڈ کو کمپیوٹر میں محفوظ کر دیا گیا ہے اور اس میں موجود اغلاط کی درستگی موجودہ کرپٹ نظام سے کرائی گئی ہے۔اب زمین سے متعلق معلومات کے لئے پٹواری کے نجی دفتر کے بجائے جدید کمپیوٹرز سے لیس پنجاب کی تمام 143 تحصیلوں میں اراضی ریکارڈ سینٹر بنا دیے گئے ہیں جہاں ایک چھت کے نیچے زمین کے معاملات تک رسائی ممکن ہو گئی ہے۔
میرے نسٹ یونیورسٹی کے لئے کیے گئے تحقیقی مقالے میں دلچسپ حقائق سامنے آئے ہیں، تحقیقی مقالے کا بنیادی مقصد زمینی ملکیت کی جانچ کے لئے مربوط جغرافیائی نظام کا استعمال تھا۔ موضع چک نمبر154۔ایم ایل،تحصیل کوٹ ادو، ضلع مظفرگڑھ میں جب اعداد و شمار کے رجسٹر کا تقابلی جائزہ مربوط جغرافیائی نظام سے بنائے گئے نقشوں سے کیا گیا تو 8 ایکڑ زمین کاغذوں میں موجود تھی جبکہ زمین پر اس کا کوئی وجود نھیں تھا۔پنجاب کے تین اضلاع میں جدید نقشہ سازی کا تجربہ بھی کیا گیا ہے جو کہ اغلاط سے بھرپور ہے اور اس میں تکنیکی مہارتوں کا بھی فقدان پایا گیا ہے۔
پنجاب حکومت نے اب تک صرف اعداد وشمار کو کمپیوٹرائز کیا ہے جبکہ خلائی سیاروں سے زمینی سروے اور نقشہ سازی کا کام ابھی پایہ تکمیل ہونا ہے جس سے زمینی حقائق سامنے آئیں گے اورا غلاط کی صحیح معنوں میں درستگی اور ناجائز قابضین کی نشاندہی ممکن ہو سکے گی۔حقیقت میں اراضی کی معلومات کے نظام کی تکمیل ابھی دور ہے۔ہاں شاید وزیر اعلی پنجاب یہ کہنے میں حق بجانب ہیں کے محکمہ مال میں پٹواراور کرپٹ کلچر کا کسی حد تک خاتمہ اس نظام سے ممکن ہو سکے گا۔

This is a guest post in Urdu by Sheraz Ahsan.

Finding Coverage Overlap between Radar Altimetry, SAR, and MODIS Imagery

Recently, I had to plot coverage overlap between Radar Altimetry, SAR, and MODIS imagery for a research proposal. It was an interesting little problem, and I want to point out the resources that could be helpful to others in solving a related or similar problem.

SensorOverlap_USWestCoast_JanMarch2011_1

Radar Altimetry:

For altimetry, the requirement was to show the tracks for Jason-2 Poseidon-3 radar altimeter and Envisat Radar Altimeter 2 (RA-2). The pass locator GIS files are available on AVISO’s web page in the form of KMZ files and can be easily displayed in any GIS software tool. Since I did not have to perform any spatial analysis or queries, I used Google Earth for displaying all the required information. The individual tracks and track numbers for the altimeter tracks can be turned on / off as required.

SAR:

Next I had to find SAR coverage for the following SAR satellites / constellations for a time period of Jan. – March, 2011: Envisat ASAR, TerraSAR-X / TanDEM-X, COSMO-SkyMed.

To find Envisat ASAR archive imagery coverage, ESA’s EOLi (Earth Observation Link) desktop software tool has to be downloaded. EOLi allows for customized search for Envisat ASAR archived scenes, and the search query results can be exported as KML / KMZ files.

TerraSAR-X / TanDEM-X archive scenes can be searched from Airbus Defense & Space TerraSAR-X Archive web system. KML files of selected scenes can be downloaded easily.

To search COSMO-SkyMed scenes, the user first has to make an account on the COSMO-SkyMed scientific and institutional users webpage (or here), after which archive search option is available. KML files of selected scenes can be downloaded easily.

MODIS:

Since MODIS scene is much larger in extent from all the other satellites, so only one MODIS scene extent needed to be shown as a sample. I downloaded a suitable MODIS Level-2 SST scene from the NASA Ocean Color Web data access system after looking at the preview images. However, my interest is just in the bounding box coordinates so I can display the corresponding polygon in Google Earth. I accessed the metadata information in the Ocean Color netCDF file through the ncdisp function in MATLAB, and noted down the minimum and maximum latitude / longitude values. Next I needed to draw a vector polygon with these bounding box coordinates. Various tools are available on the web for this task, and I used this KML generator tool. Entering the four corner coordinates in the text input tab generates a KML polygon which can be downloaded.

Final Coverage Overlay Map:

Overlaying all the KML / KMZ layers generated above and assigning them suitable colours / thickness etc., I got a really nice display map from Google Earth. The output was saved as an image, during which Google Earth allows the user to insert and manually place the North arrow, scale bar, title, and description. The final output map is shown above.

Iceye Planning to Launch Micro-SAR Constellation

 

Finnish space technology startup Iceye is planning to launch SAR imaging microsatellites. By setting up this micro satellite SAR constellation, they plan to be able to deliver SAR imagery in near-real-time to a vast variety of consumers and users, something which is not currently possible. Radar / SAR image analysts will love their tagline: From space, through clouds and darkness. They have already secured lot of seed funding and also have support from the EU Horizon 2020 program. Iceye claims to have squeezed radar imaging sensors into a microsatellite platform 20 times lighter than current government SAR satellites, and using COTS electronics allows for cost reduction and a faster technology update cycle.

Let’s see how many years they take to set up their microsatellite SAR constellation and transmission network. I wonder how their ground segment will be set up. Will they give small receiving antennas to regular consumers, just like portable satellite communication boxes or satellite telephones? Or will they deliver their near-real-time products through web / ftp?

Efforts are also underway to deliver SAR imagery in near-real-time from existing SAR satellites. Take a look at this recent blog post about DLR’s experiment with the Space Data Highway for near-real-time SAR image delivery.